اردو

ایران | آیت اللہ خامنہ ای: ایران یقینی طور پر امریکہ پر جوابی حملہ کرے گا


رہبر معظم انقلاب اسلامی حضرت آیت اللہ علی خامنہ ای نے کہا کہ ایران جنرل قاسم سلیمانی کی شہادت کو کبھی فراموش نہیں کرے گا اور امریکہ پر ضرور جوابی وار کرے گا۔

آیت اللہ خامنہ ای نے منگل کی شام عراق کے وزیر اعظم مصطفی الکاظمی کا استقبال کیا۔

اپنی سرکاری ویب سائٹ کے مطابق آیت اللہ خامنہ ای نے کہا ہے کہ ایران نے کبھی بھی عراق کے معاملات میں دخل اندازی کرنے کا سوچا بھی نہیں اور نہ ہی اس کا کوئی ارادہ ہے۔ ایران اپنی علاقائی سالمیت اور داخلی اتحاد و اتفاق کے ساتھ ایک مستقل اور آزاد عراق کا حامی ہے۔

ایران یقینی طور پر کسی بھی ایسی چیز کے خلاف ہے جو عراق کو کمزور کرے۔ عراق کے بارے میں امریکی نقطہ نظر ہمارے نقطہ نظر کے بالکل مخالف ہے کیونکہ امریکہ صحیح معنوں میں دشمن ہے اور عوامی ووٹوں کے ذریعہ منتخب ہونے والی آزاد ، مضبوط عراقی حکومت کی مخالفت کرتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ جنرل قاسم سلییمانی اور ابو مہدی المہندس کے قتل میں امریکہ کا جرم عراق میں موجودگی کی وجہ سے ہے۔ انہوں نے آپ کے گھر میں آپ کے مہمان کو مار ڈالا اور انہوں نے اس جرم کا واضح طور پر اعتراف بھی کیا۔ یہ کوئی معمولی بات نہیں ہے۔ اسلامی جمہوریہ ایران، حاج قاسم سلیمانی کی شہادت کو کبھی فراموش نہیں کرے گا اور یقینی طور پر امریکہ کو ایک جوابا ضرب لگائے گا۔

رہبر معظم انقلاب اسلامی نے بھر پور تاریخی ، مذہبی ، ثقافتی مشترکات کی وجہ سے ایران اور عراق کے درمیان تعلقات کو '' دوستانہ '' قرار دیا اور اس بات پر زور دیا کہ عراق میں سلامتی اور وقار ، علاقائی اتھارٹی اور صورتحال کی بہتری اسلامی جمہوریہ ایران کے لئے بہت اہم ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران یقینی طور پر هل اس إقدام کے خلاف ہے جس سے عراقی حکومت کمزور ہو۔

آیت اللہ سیستانی، عراق کے لئے ایک بہت بڑی نعمت ہیں۔ حشد الشعبی (مقبول موبلائزیشن فورسز) بھی عراق کے لئے ایک عظیم نعمت ہے جس کی حفاظت کی جانی چاہئے۔